بروز حشر میں بے خوف

بروز حشر میں بے خوف گھس جاؤں گا جنت میں
وہاں سے آئے تھے آدم وہ میرے باپ کا گھر ہے

——

ان عمل كے ساتھ جنت کا طلبگار ہے کیا
وہاں سے نکالے گئے آدم تو تیری اوقات ہے کیا

 

نوٹ: یہ اشعار علامہ اقبال کے نہیں ہیں

محبوبہ سے ملنے کا بڑا شوق تھا

funny-poetry

محبوبہ سے ملنے کا بڑا شوق تھا
ایک دن لکھ دیا خط اس کو
بھولی بھالی سمج نہ سکی میرے پیار کو
دے دیا خط اپنے بھائی مختیار کو
میں نے دریا کے بہت بڑی موج دیکھی
جب اپنے پیچھے مختیار کی فوج دیکھی
لوگوں نے کہا کے کس پہ عذاب آیا ہے
دِل نے کھا نس پتر تیرے خط دا جواب آیا ہے