ہزاروں کی بھیڑ میں تنہا ہیں

ہزاروں کی بھیڑ میں تنہا ہیں
ایک تیری ملاقات کے طلبگار ہیں

سمجھے نہ تو زمانے کے جیسا مطلبی
اسی لیے تھوڑا محتاط ہیں

عشق میں تیرے ڈوب گئے اتنا
کہ خود سے بھی بیزار ہیں

کسی کا بولنا بھی نہیں لگتا اچھا
اک تیری آواز کے طلبگار ہیں

شفق

موج دریا بھی خاموش تھی

موج دریا بھی خاموش تھی
فضا بھی اداس تھی
سکوت تھا ہر طرف پیاس تھی
ان سب کی وجہ ایک ہی بات تھی
وہ رات جدائی کی رات تھی
میں بضد تھی اسے روکنے پر
وہ بھی اڑا رہا جانے پر
ختم کیسے ہوتی بات
اس کو پیاری اس کی انا تھی

شفق