کاش آ جائے ہمیں بولنا پُھولوں کی زباں

pholo ki zuban poetry

جانتا کوئی نہِیں آج اصُولوں کی زباں
کاش آ جائے ہمیں بولنا پُھولوں کی زباں

موسمِ گُل ہے کِھلے آپ کی خُوشبُو کے گُلاب
بولنا آ کے ذرا پِھر سے وہ جُھولوں کی زباں

یہ رویّہ بھی ہمیں شہر کے لوگو سے مِلا
پُھول کے مُنہ میں رکھی آج ببُولوں کی زباں

آپ نے سمجھا ہمیں غم کا تدارُک بھی کیا
جانتا کون بھلا ہم سے فضُولوں کی زباں

بے وجہ غرق کوئی ایک بھی اُمّت نہ ہُوئی
ڈالتے پُشت پہ جب لوگ رسُولوں کی زباں

ہم نے مانا کہ اُسے پِھر بھی بنے رہنا تھا
کاٹتی دِل کو مگر درد شمُولوں کی زباں

آج حسرت سے ہر اِک دُور نِکل بھاگے ہے
کیا ہُؤا؟ بولتا ہے کیا یہ بگُولوں کی زباں

رشِید حسرتؔ

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں