جِسم تھا نُور اِسے ہم نے ہی پہنائی رات

urdu ghazal raat

جِسم تھا نُور اِسے ہم نے ہی پہنائی رات
کھا گئی دِن کے اُجالوں کو یہاں چھائی رات

شب کے دامن میں فقط خواب ہے محرُومی ہے
ہم کو مفہُوم یہ سمجھانے چلی آئی رات

ہم تو خُود اپنی ہتھیلی پہ جلا لائے چراغ
پِھر جو اشکوں کے سِتاروں سے نہ سج پائی رات

دِن ہمیں شب کے اندھیرے میں ملا، کیا کرتے
دن کو کُچھ پُھول دِیئے شب میں مگر ڈھائی رات

ہم نے دو دِن کو محبّت کا اُجالا دیکھا
نفرتوں کی جو چلی باد تو پھر چھائی رات

اِمتحاں اور طرح کے ہی لِیئے شب نے مِرے
کُچھ نہ کر پائے تو بس دِن میں چُرا لائی رات

سُن لے فریاد مِری کوئی، ضرُوری تو نہِیں
آہ و حسرتؔ کے سبب آج ہے پُروائی رات

رشِید حسرتؔ

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں