اِک شخص کے جانے سے بدل جاتی ہے دُنیا

rasheed hasrat ghazal

اِک شخص کے جانے سے بدل جاتی ہے دُنیا
پِھر آہ بھی کرلو تو مچل جاتی ہے دُنیا

میں پیار کا طالب جو ہُؤا اہلِ جہاں سے
زردی سی کوئی چہرے پہ مل جاتی ہے دُنیا

جِس جا پہ کبھی تھا میں ابھی تک بھی وہِیں ہُوں
میں دیکھتا رہتا ہوں نِکل جاتی ہے دُنیا

حالات کِدھر جاتے ہیں جاتا ہوں کِدھر میں
میں ڈُوبتا جاتا ہوں، سنبھل جاتی ہے دُنیا

کوشِش ہی نہِیں کرتی سمجھنے کی مُجھے یہ
کومل سے یہ جذبات مسل جاتی یے دُنیا

آباد جہاں دِل کا، مگر خوف لگا ہے
کیا جانِیئے کب آہ میں ڈھل جاتی ہے دُنیا

میں چال چلُوں، سادہ رہُوں ایک برابر
شاطِر سِی مگر چال ہی چل جاتی ہے دُنیا

خُود حُسن کی بانہوں میں مچلنے کی تمنّا
میں شعر اگر کہتا ہوں جل جاتی ہے دُنیا

وہ چہرۂِ خُوش رنگ رشِیدؔ اِتنا حسِیں ہے
ہیں نقش و نِگار ایسے پِھسل جاتی ہے دُنیا

رشِید حسرتؔ

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں