تمام عُمر جِسے میں نے اعتبار دیا

tmam umar

تمام عُمر جِسے میں نے اعتبار دیا
دغا سے تُم نے بیک لخت اُس کو مار دیا

وفائیں دی ہیں اُسے میں نے عُمر بھر لیکِن
صِلے میں اُس نے فقط مُجھ کو اِنتظار دیا

مُجھے قرِیب رکھو یا کہ تُم رکھو دُوری
تُمہاری چاہ پہ ہے، تُم کو اختیار دیا

یہ اُس کا خاص کرم ہے، عطا ہے مولا کی
دیا شعُور مُجھے اور اِفتخار دیا

نہِیں ہُوں تابع اگر ماں کے، میری بِیوی نے
عجیب زہر مِرے ذہن میں اُتار دیا

یہ وسوسہ ہے کہ یہ خواب یا حقِیقت ہے
امیرِ شہر نے لوگوں کو روز گار دیا

مِرے وجود میں بستا تھا اِک رشِید حسرتؔ
سو ایک عرصہ ہُؤا میں نے اُس کو مار دیا

رشِید حسرتؔ

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں