اگرچہ دُشوار تھا مگر زیر کر لِیا تھا

rasheed hasrat poetry

اگرچہ دُشوار تھا مگر زیر کر لِیا تھا
انا کا رستہ سہل سمجھ کر جو سر لِیا تھا

وُہ کہکشاؤں کی حد سے آگے کہیں بسا ھے
طلب میں جِس کی زمِیں پہ بوسِیدہ گھر لِیا تھا

گُلوں کی چاہت میں ایک دِن کیا بِچھایا ھوگا
کہ ھم نے کانٹوں سے اپنا دامان بھر لِیا تھا

بڑھایا اُس نے جو گرم جوشی سے ھاتھ یارو
نہیں تھا مسلک اگرچِہ نذرانہ، پر لِیا تھا

اُسی کا بخشا ھؤا تھا سب کُچھ تو دیر کیسی؟
بس اِک اِشارے پہ کاسۂِ جان دھر لِیا تھا

دِلِ شِکستہ کی مُدّتوں تک خبر نہ آئی
کُھلا کہ مُٹھی میں تُو نے اے فِتنہ گر لِیا تھا

عدو نے چالوں سے چِت کِیا ھے رشِید حسرتؔ
وگرنہ ھم نے بھی اسپ تو نامور لِیا تھا

رشِید حسرتؔ

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں