سراغِ منزل لیے راہِ بے نشاں کی تلاش میں

urdu ghazal

سراغِ منزل لیے راہِ بے نشاں کی تلاش میں
کارواں بھٹک گیا میرِ کارواں کی تلاش میں

امیرِ شہر ہے یہاں میمن ہے کوئی مہر ہے
بے نام ہوئے لوگ فخرو گمان کی تلاش میں

مردِ میدان ہوں مجھے کیا غرض جیت ہار سے
رہتا ہوں ہر لحظہ کڑے امتحاں کی تلاش میں

اجنبی شہر میں پُوچھتا رہا میں اس کا پتہ
کیے راز فاش ہوئے رازداں کی تلاش میں

بے سفینہ برہنہ پا ہی چل دیا سوئے منزل
بحر کو پار کرنے انجم بیاباں کی تلاش میں

تبصرہ کریں