سنو کچھ کہنا چاہتا ہوں

urdu ghazal

سنو کچھ کہنا چاہتا ہوں
تمھارے دِل میں رہنا چاہتا ہوں

تمہاری آنكھوں کا دیوانہ ہوں
شمع حسن کا پروانہ ہوں

تمہاری اداؤں نے محسور کیا
یہ کہنے پہ مجبور کیا

تجھ سا نہیں جہاں میں کوئی
زمیں میں کوئی آسمان میں کوئی

اِس قدر صاحبِ جمال ہے تو
بے مثل ہے تو بے مثال ہے تو

میں تم میں تم مجھ میں گم رہو
میں جسم بنا رہوں روح تم رہو

میرے سامنے تیرا حسن و جمال ہو
جان تیری قسم تیری ہی خیال ہو

تبصرہ کریں