یاد تیری کو میں بھلا دوں کیا

urdu-ghazal-shayari

یاد تیری کو میں بھلا دوں کیا
خط تیرے میں سبھی جلا دوں کیا

میری بے خوابی جان لیتی ہے
کچھ گھڑی خود کو میں سلا دوں کیا

مجھ کو کمزور تم سمجھتے ہو
شہر تیرے کی جڑ ہلا دوں کیا

مٹ گیا غم تیرے پلانے سے
غم زدہ کو تیرا بتا دوں کیا

عشق تیرے میں رند جھومیں گے
رقص بلھے سا میں دکھا دوں کیا

چاہ سے پڑھ لے فاتحہ کوئی
عشق کا مقبرہ بنا دوں کیا

تبصرہ کریں