میری اجڑی ہوئی بستی کو یونہی سنسان رہنے دو

sad ghazal shayari

میری اجڑی ہوئی بستی کو یونہی سنسان رہنے دو
خوشیاں راس نہیں ‌آتی مجھے پریشان رہنے دو

زینت نہیں‌ بنتا تو نہ بن میرے دل کے آنگن کی
پر اپنے آشیانے پر میری اُڑان رہنے دو

تیری گلیوں میں‌ یوں پھرنا اگر نادانی ہے تو سُن
میں ‌دانشمند نہیں ‌بنتا مجھے ناداں رہنے دو

نہیں ‌میں‌ مانگتا تجھ سے پھولوں سے بھری ٹہنی
جو جلتا ہے میرے دل میں ‌وہ آتشداں رہنے دو

تیری ہستی میں‌ مانا کہ ہم بسیرا کر نہیں سکتے
پر اپنی سوچ کا کچھ پل کے لیے مہمان رہنے دو

تبصرہ کریں