ماں وہ چھت ہے بِنا جس کے گھر نہیں ہوتا

ghazal

ماں وہ چھت ہے بِنا جس کے گھر نہیں ہوتا
باپ دیوار ہے جو چھت کا پِلر ہوتا ہے

کوئی تو ہے کہ جو ہر روز یاد کرتا ہے
وہ جس کی محفلوں میں میرا ذکر ہوتا ہے

اس نئے سال یہ سوچا ہے کہ خوش رہنا ہے
جس طرح کوئی اکیلا بے فکر ہوتا ہے

چھوڑ جائے گا تجھے جب کوئی چاہنے والا
میں بھی پوچھوں گا بتا درد کدھر ہوتا ہے

تیرے شہر کے پھولوں کی بھی مثال نہیں
جس طرح کوئی بہت مہنگا عطر ہوتا ہے

میرے حالات نہ پوچھو کہ میں آوارہ نصیب
ایسا ہوں جیسے کوئی در بدر ہوتا ہے

میں وہ دریائے محبت ہوں کہ جس کا سلمان
اک تیرے دل کے سمندر میں اُتر ہوتا ہے

سلمان احمد اعوان

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں