کوئی اہلِ نظر نہیں لگتا

wasif ali wasif ghazals

کوئی اہلِ نظر نہیں لگتا
اس لیے معتبر نہیں لگتا

سب دئیے ہم نے خود بجھا ڈالے
اب ہواؤں سے ڈر نہیں لگتا

خود بھی وہ اپنی قدر و قیمت سے
اس قدر بے خبر نہیں لگتا

تب پرندے بھی لوٹ جاتے ہیں
پیڑ پر جب ثمر نہیں لگتا

خوف وہ بام و در کے اندر ہے
جو پسِ بام و در نہیں لگتا

اجنبی اجنبی سے چہرے ہیں
یہ مجھے اپنا گھر نہیں لگتا

لے کے جائے گا عمر، وحشت کا
سلسلہ مختصر نہیں لگتا

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں