جذبہ عشق پِھر مچلتا ہے

jazba-e-ishq

جذبہ عشق پِھر مچلتا ہے
ڈھلتے ڈھلتے یہ چند ڈھلتا ہے

پوچھتی پِھر رہی ہے اوس ابھی
پھول کب پیرہن بدلتا ہے

میں تو چلتا ہوں تیری یاد كے ساتھ
راستہ میرے ساتھ چلتا ہے

تیرے آنگن میں شب اترتی ہے
تیری کھڑکی سے دن نکلتا ہے

خوشبوئیں خوشبوؤں سے ملتی ہیں
کس لیے پھول ہاتھ ملتا ہے

لاکھ نازک سہارے ہوں لیکن
گرنے والا کہاں سنبھلتا ہے

آرزوؤں کی فصل دِل میں ہے
چشمہ آنكھوں سے کون ابلتا ہے

ہَم جھلس تو رہے ہیں اے جاناں
تیرا سورج بھی تو پگھلتا ہے

رائے ہَم کو بدلنی پڑتی ہے
وقت کب فیصلہ بدلتا ہے

تبصرہ کریں