دیکھا آئینہ تو پِھر جذبوں کا یوں اظہار ہوا

dard-poetry

دیکھا آئینہ تو پِھر جذبوں کا یوں اظہار ہوا
وہ شخص پِھر سے میرے سامنے اشکبار ہوا

دکھ میں رات کٹی تو سویرا بھی مدھم سا رہا
تنحیون كے سوگ کا چرچا بھی بےشمار ہوا

بڑے وثوق سے رکھا تھا ربط انکی آنكھوں سے
وہ جو لمحہ جدائی کا تھا پِھر کیوں بے قرار ہوا

ان سے ملنے کی تمنا میں جو تھی زندگی گزری
پِھر یوں جان ہَم نے لٹا دی تھی کے نہ انتظار ہوا

جو عشق ہَم نے کیا تھا اُس کا عالم مت پوچھو
مٹا دیا خود کو ہَم نے کے محبت کا کاروبار ہوا

تبصرہ کریں