بادل ہوں برس جاؤں تو الزام نہ دینا

barish-poetry

بادل ہوں برس جاؤں تو الزام نہ دینا
تیرے دامن میں سمٹ آؤں تو الزام نہ دینا

راحت ہوں ہمیشہ تیرے آنگن میں رہوں گا
خوشبو ہوں بکھر جاؤں تو الزام نہ دینا

میں پھول ہوں بالوں میں سجائے ہوئے رکھنا
سانسوں میں مہک جاؤں تو الزام نہ دینا

بانہوں سے لپٹ جاؤں گا گجروں کی طرح میں
قربت سے بہک جاؤں تو الزام نہ دینا

خوابوں کی طرح آنكھوں میں بسائے ہوئے رکھنا
تیری نیندوں میں بھٹک جاؤں تو الزام نہ دینا

تبصرہ کریں