ستارے جو چمکتے ہیں کسی کی چشم حیران میں

ستارے جو چمکتے ہیں کسی کی چشم حیران میں
ملاقاتیں جو ہوتی ہے جمال ابرو باراں میں
یہ نا آباد وقتوں میں دلِ ناشاد میں ہو گی
محبت اب نہیں ہو گی یہ کچھ دن بعد میں ہو گی
گزر جائیں گے جب یہ دن یہ ان کی یاد میں ہو گی

تبصرہ کریں