یوں ہی انتظار کرتا رہا اور وقت ڈھلتا رہا

urdu-ghazal-shayari

یوں ہی انتظار کرتا رہا اور وقت ڈھلتا رہا
میرے انتظار کا سورج ہر لمحہ پگھلتا رہا

طے تو یہ ہوا تھا كے پائیں گے ایک ہی منزل
بیچ راہ میں وہ مکر گیا سوئے منزل میں چلتا رہا

کبھی اُس كے لیے ہنس دیئے کبھی اُس كے لیے رو دیئے
وہ خود کو تو نا بدل سکا بس مجھ کو ہی بدلتا رہا

اب تک کیسے چپ رہا یہ مت پوچھ ماجد
وقت مجھے بہلاتا رہا اور میں بہلتا رہا

تبصرہ کریں