اس پھول کو توڑ لانے کی ہے خواہش

phool ko torne

اس پھول کو توڑ لانے کی ہے خواہش
جس کو اک دن میں نے چھوا بہہت

تبصرہ کریں