تیری یاد

Tari-Yaad

خُدا جانے کیوں
تیری یاد بہت بیمار تھی گزشتہ رات
ساری رات اُس کے ماتھے پر
ٹھنڈے پانی کی پٹی رکھ کر
پاوٴں دبا کر، ہاتھ سہلا کر
سینے کی گرمائش پہنچا کر
بُوسہ دے کر، ماتھا چُوم کر
بہت کوشش کی زندہ رکھنے کی
لیکن! رخصت ہونے سے پہلے
آخری ہچکی لے کر یوں خاموش ہوئی
کہ جیسے مجھ سے آشنا ہی نہیں

تبصرہ کریں