آج پھر بجھ گئے جل جل کے امیدوں کے چراغ

taron bhari raat

آج پھر بجھ گئے جل جل کے امیدوں کے چراغ
آج پھر تاروں بھری رات نے دم توڑ دیا

تبصرہ کریں