تیرے غصے بھرے لہجے کو بھی ترستی ہوں

kuch to sunao

تیرے غصے بھرے لہجے کو بھی ترستی ہوں
اپنی پری کو کچھ تو سناو بابا

تبصرہ کریں