نہ جانے کون سا آسیب دل میں بستا ہے

parveen shakir poetry

نہ جانے کون سا آسیب دل میں بستا ہے
کہ جو بھی ٹھہرا وہ آخر مکان چھوڑ گیا

guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام تبصرے دیکھیں