کس لیے وہ شہر کی دیوار سے سر پھوڑتا

dewana na tha

کس لیے وہ شہر کی دیوار سے سر پھوڑتا
قیس دیوانہ سہی اتنا بھی دیوانہ نہ تھا

تبصرہ کریں