دل کی باتوں میں نہ آیا کیجئے

dil ki baaton main

دل کی باتوں میں نہ آیا کیجئے
یوں ہمیں نہ آزمایا کیجئے
ہم کو لگتا ہے شبِ ہجراں سے ڈر
چھوڑ کی ہم کو نہ جایا کیجئے

تبصرہ کریں