دشتے تنہائی میں جسے چھوڑ آئے تم

دشتِ تنہائی میں جسے چھوڑ آئے تم
سرابوں سے پُوچھتا ہے یہ پیار کیسا ہے

تبصرہ کریں