جناب دم کی عجب نفسیات ہوتی ہے

funny-urdu-poetry

جناب دم کی عجب نفسیات ہوتی ہے
کہ اس کی جنبش ادنیٰ میں بات ہوتی ہے

وفا کے جذبے کا اظہار دم ہلانا ہے
جو دم کھڑی ہے وہ نفرت کا تازیانہ ہے

جو لمبی دم ہے وہ عالی صفات ہوتی ہے
جو مختصر ہے بڑی واہیات ہوتی ہے

وہ جان دار مکمل نہیں ادھورا ہے
وہ جس کے دم نہیں ہوتی ہے وہ لنڈورا ہے

جہاں میں یوں تو ہے اونچا مقام انساں کا
مگر لنڈوروں میں آتا ہے نام انساں کا

میں سوچتا ہوں جو انساں کے دم لگی ہوتی
کسر جو باقی ہے وہ بھی نہ رہ گئی ہوتی

وہ اپنی جان بچانے کو یہ سپر لیتا
جو ہاتھ سے نہیں کر پاتا دم سے کر لیتا

کچھ اس طریقے سے رد عمل ہوا کرتا
گزرتی دل پہ تو دم پر اثر ملا کرتا

خوشی کا جذبہ ابھرتا تو دم اچک جاتی
کوئی اداس جو ہوتا تو دم لٹک جاتی

کسی پہ دھونس جماتا تو دم اٹھا لیتا
کسی سے دھونس جو کھاتا تو دم دبا لیتا

بزرگ لوگ جوانوں سے جب خفا ہوتے
زباں پہ ان کے یہ الفاظ برملا ہوتے

تمہیں خبر نہیں تھی کیسی آن بان کی دم
کٹا کے بیچ لی تم نے تو خاندان کی دم

کہیں جو فاتح اعظم کوئی کھڑا ہوتا
مرے خیال میں یوں پوز دے رہا ہوتا

بڑے غرور سے لہرا رہا ہے دم اپنی
بجائے مونچھوں کے سہلا رہا ہے دم اپنی

سبھا میں جب کوئی دستور نو بنا کرتا
شمار رائے کچھ اس طرح سے ہوا کرتا

جو لوگ اس کے موافق ہیں دم اٹھا لیں وہ
جو لوگ اس کے مخالف ہیں دم گرا دیں وہ

امیر لوگوں کی دم میں انگوٹھیاں ہوتیں
انگوٹھیوں میں نگینوں کی بوٹیاں ہوتیں

گھمنڈ اور بھی بڑھ جاتا اور اتراتے
یہ لوگ جیب گھڑی اپنی دم میں لٹکاتے

حسین لوگ کسی طرح سے نبھا لیتے
نہ ملتا کچھ تو فقط دم کو ہی رنگا لیتے

جو مفلسی سے کبھی کوئی اپنی جھلاتا
تو ہسپتال میں لے جا کے دم کٹا آتا

حسین لوگوں کی پھولوں سے دم ڈھکی ہوتی
کہ پھلجھڑی سی فضاؤں میں چھٹ رہی ہوتی

دموں سے پھر قد زیبا کچھ اور سج جاتے
کہاں کی زلف کہ دم ہی میں دل الجھ جاتے

یہ افتخار جو ہم عاشقوں کو مل جاتا
ہر ایک غنچۂ امید دل کا کھل جاتا

کسی کو بزم میں ہم اپنا یوں پتہ دیتے
بجائے پاؤں دبانے کے دم دبا دیتے

کبھی کمند کا جو کام دم سے ہو جاتا
ہم عاشقوں کا بڑا نام دم سے ہو جاتا

اشارہ کر کے ہمیں دم وہ اپنی لٹکاتے
ہم ان کے کوٹھے پہ دم کو پکڑ کے چڑھ جاتے

ہماری راہ کا ہر کانٹا پھول ہو جائے
اگر دعا یہ ہماری قبول ہو جائے

کہ آدمی کے لیے دم بہت ضروری ہے
بغیر دم کے ہر اک آرزو لنڈوری ہے

تبصرہ کریں