میری وفا كے دیپ وہ سرِ شام جلائے گا

meri-wafa

میری وفا كے دیپ وہ سرِ شام جلائے گا
خود روشنی کے بھنور میں الجھتا ہی جائے گا

یوں رات اسکی سوچنے میں گزری تھی اِس طرح
كے صبح کا سورج کون سا پیغام لائے گا

ستاروں کی جستجو میں وہ گھر سے نکل پڑا
کس کو تھی خبر كے وہ ناكام آئے گا

ایسا صنم اسے چاہئے جو بکھرے نہ ٹوٹ كے
وہ دِل كے نگار خانے میں ایسا بُت سجائے گا

ہم کو بھی اپنے آپ سے شکایت سے ہو گئی
حال دِل جو اسے سنایا تو وہ روٹھ جائے گا

پِھر وہ زمزمے میں مبتلا یوں شام تک رہا
گزرے گا جب گلی سے میرا گھر بھی آئے گا

تبصرہ کریں