تصور میں تیرے ہمیشہ مخمور رہا ہوں

urdu-shayari

تصور میں تیرے ہمیشہ مخمور رہا ہوں
تو میرا ہَم نشیں ہے بہت مغرور رہا ہوں

دِل كے نگار خانے میں تجھ کو سجا لیا ہے
یوں الفت کی دنیا میں بہت مشہور رہا ہوں

چرچا ہے ان ہواؤں میں اب میری وفاؤں کا
سب جانتے ہیں عشق میں تیرے چور رہا ہوں

اپنے جو سبھی خواب تھے تیرے نام لکھ دیئے
یوں دِل كے ھاتھوں اپنے بہت مجبور رہا ہوں

تیرے عشق کا صدقہ ہے كے جیتے ہیں آج تک
بن تیرے صنم غم سے بہت رنجور رہا ہوں

تبصرہ کریں