ہر اک موسم میں وہ اندازِ بدلتا ہوا نظر آئے

sad-shayari

ہر اک موسم میں وہ اندازِ بدلتا ہوا نظر آئے
خزاں ہو یا برسات وہ مچلتا ہوا نظر آئے

پتھر کا جو بنتا تھا وہ شخص اب ہَم کو
ہلکی سے اک چوٹ پہ بگھلتا ہوا نظر آئے

سمیٹ لیتا ہے خود کو وہ انجان سی راہ میں
گرنے سے پہلے ہی وہ سنمھلتا ہوا نظر آئے

اور صبح کی لالی میں وہ چمکتا ہوا آفتاب
پِھر رات كے پہلو میں وہ سلگتا ہوا نظر آئے

ہر لمحہ خوشی کا ہے یوں مہربان اس پر
پر تنہیایوں كے شور میں وہ جلتا ہوا نظر آئے

تبصرہ کریں