تیری خاطر ہم اک شام چرانے نکلے

urdu-nazam

تیری خاطر ہم اک شام چرانے نکلے
دَرد میں ڈھال كے خود کو آزمانے نکلے

پِھر انہی ترسی نظروں سے تماشا دیکھا
بات اتنی سے تھی کے سب زخم پُرانے نکلے

غم کی آغوش میں خود کو سمیٹا ایسے
رات اتنی ہے تو پِھر ہَم سوگ منانے نکلے

وہ جو نظروں میں طلاطم تھا دیکھا سب نے
راز جو آنكھوں سے عیاں تھے وہ چھپانے نکلے

میری تقدیر میں تنہائی کے سوا کچھ بھی نہیں
تیرے آنے کے سبھی وعدے تو بہانے نکلے

تبصرہ کریں