ہر اک شب میری تازہ عذاب میں گزری

wasi-shah-poetry

ہر اک شب میری تازہ عذاب میں گزری
تمھارے بعد تمھارے ہی خواب میں گزری
میں اک پھول ہوں وہ مجھ کو رکھ كے بھول گیا
تمام عمر اسی کی کتاب میں گزری

تبصرہ کریں